عورت، گھوڑا اور کبُوتر

،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،

جمیل نقش کے لِئے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

بنیروں، خانقاہوں، چھتریوں

گولائیوں، کاندھوں کی محرابی مسافت میں

کبوتر جھانجھنیں اپنی گنوا آئے

فسُردہ ہیں جدائی کے کگر پر

اورپناہ لیتی ہے اک بے شکل لڑکی

گھوڑے کے نتھنوں

پرندے کے پروں میں پھر

ادھورا پن ہمیں کہتا ہے

اس بے چہرگی کے آئینے میں

خواب کی تصویر کو دوبارہ دیکھو

یہاں بے چین روحوں کو دکھاتے ہیں

کبوتر، گھوڑا اور عورت

یہ تینوں

''نقش'' کو

پُتلی کی طرح سے نچاتے ہیں

جو ساکت ھو چکی ھے پیش منظر میں

پرندہ، مانس اور چوپایہ

بے ڈھب ھو چکے ہیں

مصور فطرتی، جنگلی پرندے کے مقابل

پینٹ کرتا ہے نیا اپنا کبوتر

کھو نہ دینا

ھونٹوں پر اخروٹ مَل کر

ٹیڑھی میڑھی لڑکیو

مت ہجر کی برسات میں رکھنا کبُوتر

تنویر قاضی

تنویر قاضی

تنویرقاضی کی پیدائش  11 ستمبر  1955کو ننکانہ صاحب میں ہوئی- تعلیم  ۔۔۔  ایم ۔ اے  ۔،۔ پنجابی ، ڈپلومہ ( انسیٹیوٹ آف بینکرز ین پاکستان)کرنے   کے بعد بینکر کی پیشہ ورانہ ذمہ داریوں کو نبھا تے ہوئے شاعری سے  بھی ناتہ نہیں توڑا .اس طرح ان کا شعری مجموعہ "جادو سبز ھواؤں کا 1998 میں آیا .ان کی پہلی  غزل "  پاکستانی ادب . کراچی  ، 1974 ..بیسویں صدی  ۔۔ دیلی انڈیا  ۔۔۔ 1974 اور پہلی  نظم ۔۔  وارث شاہ  ۔ملتان۔ (1974)میں شائع ہوئی 

Related Posts

Subscribe

Thank you! Your submission has been received!

Oops! Something went wrong while submitting the form