" امید "

...

آہ شب گیر کے نادیدہ اثر کی امید

ستم و جور کی دیوار میں در کی امید

کم نگاہی کے تسلسل میں نظر کی امید

ذہن غواص میں تحصیل گہر کی امید

دشت پر خار میں دید گل تر کی امید

شب تاریک میں تابندہ سحر کی امید

یہی امید تو جذبوں کو جواں رکھتی ہے

. کاروان غم ہستی کو..... رواں رکھتی ہے.!

......

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ چراغِ منزل ۔۔۔۔۔۔۔

تھا عجب عا لمِ دلِ سر شار ۔۔۔۔۔

جب ہوا تھا یہ کا روان ۔۔۔ رواں

خواب تھے کیسے کیسے آنکھوں میں

ذہن میں موجزن تھے کیا ارماں ۔۔۔۔!

زندگی میں بہار آۓ گی ۔۔۔

نام کو بھی نہیں ملے گی خزاں

مدتیں ہو گیٔیں ۔۔۔ سفر کر تے

نہ وہ منزل نہ کویٔ اس کا نشاں

ہیں اجا لے کہاں ؟ کہاں ہے مہر؟

اب بھی تا ریکیاں ہیں رقص کناں ۔۔۔۔۔۔

جی میں آتا ہے ، ترک ہی کردیں

سعیِ بے کار ، کا و شِ بے جاں ۔۔۔!!

لیکن ۔۔۔۔ اے قلبِ مضطرب ۔۔۔۔ رکنا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

دور ۔۔۔۔۔۔ اک روشنی سی ہے لر زاں

ہو نہ ہو ، یہ چراغ منزل ہے

جہدِ صبح و مسا کا حاصل ہے ۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ضیاءالدین نعیم

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Related Posts

Subscribe

Thank you! Your submission has been received!

Oops! Something went wrong while submitting the form