۔۔۔ غزل ۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جب ضروری ہو ، تبھی بولتا ہوں

دل میں جو ہے میں وہی بولتا ہوں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

یوں بھی ہوتا ہے ، نہیں بولتا میں

سب سمجھتے ہیں ، ابھی بولتا ہوں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

دوست جب مجھ سے کہیں بولنے کو

پھر ، برغبت ، بخوشی بولتا ہوں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

چپ نہیں رہتا ستم دیکھ کے میں

توڑ کر کم سخنی ۔۔۔۔۔ بولتا ہوں !

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ہر بری بات کو کہتا ہوں ، بُری

ہر بھلی شے کو بھلی بولتا ہوں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

بَشریّت کے تقاضے بھی تو ہیں

ان کے بھی تحت کبھی بولتا ہوں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

تجزیہ کرکے زباں کھولی ہے

یہ نہ سمجھو کہ یونہی بولتا ہوں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

خود بھی کرتا ہوں نعیم اُس سے گریز

میں جسے ، بے اَدَبی بولتا ہوں

۔۔۔غزل۔۔۔

**

کٹے خود اس سے ر ہا یہ ملال البتہ

کہ زشت خو تها وہ تها باکمال البتہ

**

سکون قلب گنوائے تو ایک عمر ہوئی

کما لیا بڑ ا مال و منال البتہ

**

یہ پہلی بار نہیں اس نے دام پهیلا یا

زمیں کے زنگ کا تها اب کے جال البتہ

**

خدا کے بندوں کو تم سبز باغ دکهلاو

ہمار ے واسطے ہے یہ محا ل البتہ

**

یہ کیوں کہیں کہ ملے ہی نہیں ہیں اچهے لوگ

ملے ضرور ملے خال خال البتہ

**

**

نعیم ان کے لبوں پر ہے مہر خاموشی

جبیں پہ ہے عرق انفعال البتہ

***

۔۔۔ غزل ۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

لپکے جنوں شعار ، یکے بعد دیگرے

پایا فراز ِ دار ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یکے بعد دیگرے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

پروانے اُڑ کے آتے ہیں کس اہتمام سے

ہونے کو نذر ِ نار ، یکے بعد دیگرے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

لب بستہ بستیوں کا پھر انجام یہ ہوا

سب کا لٹا قرار ، یکے بعد دیگرے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

یہ کیا ، کہ اہل ِ دل ہی کے حصے میں آ ۓ ہیں

الزام ، بے شمار ، یکے بعد دیگرے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

دل کا کمال ہے ، متزلزل نہیں ہوا

کتنے ہو ۓ ہیں وار ، یکے بعد دیگرے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اِن مسیٔلوں نے ڈھنگ سے جینے کہاں دیا

سر پر رہے سوار ، یکے بعد دیگرے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

مٹتے دکھایٔ دیتے ہیں افسوس اے نعیم

اچھے سبھی شعار ، یکے بعد دیگرے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ضیاءالدین نعیم ۔۔۔

ضیاءالدین نعیم

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Related Posts

Subscribe

Thank you! Your submission has been received!

Oops! Something went wrong while submitting the form