‍حمد 

‍شمع ظفر مہدی 

زندگی دیتا ہے جینے کی ادا دیتا ہے 

نکتہ سنجوں کو وہی ذہن رسا دیتا ہے 

‍کینوس اس کی زمین اور فلک دونوں ہیں 

‍وہ کہیں رنگ کہیں نور سجا دیتا ہے 

اس کو معلوم ہے  تخلیق کے اسرار و رموز 

قطرۂ آب پہ  تصویر بنا دیتا ہے 

پر طاؤس کو رنگوں سے مزین کرکے

رقص کا شوق بھی اس کے دل میں جگا  دیتا ہے 

اس کو زیبا ہے کہ  ہر شہ میں ہو جلوہ اس کا 

چشم پر آ ب کو آ ئینہ  بنا دیتا ہے 

میں تو وقف نہیں اس دشت کی بستی سی ابھی 

دور سے کون بھلا مجھ کو صدا  دیتا ہے

شمع نے ہاتھ اٹھا ئے ہیں اٹھائے رکھئے 

مانگنے والوں کو حد  سے  سوا دیتا ہے .

..................................  

شمع ظفر مہدی

شمع ظفر مہدی کی پیدایش بہا ر پور یو پی میں ہوئی .لکھنؤ کرامت گرلس کالج میں تعلیم حاصل کیا اور پھر علیگڑھ سے ایم اے کیا ..کافی طویل عرصہ جدہ میں مقیم رہیں وہیں شاعری کی شروعات کی . ان کے شوہر ظفر مہدی صاحب خود بھی بہترین شاعر تھے شمع ظفر مہدی صا حبہ اکا ایک شعر ی مجموعہ "ماہ  گرفتہ" کے نام سے منظر عام پر آ چکا ے . 

Related Posts

Subscribe

Thank you! Your submission has been received!

Oops! Something went wrong while submitting the form