ارشد مرشد

جو ہم پے گزری سو گزری۔۔

   گزشتہ  رات پورے ملک  میں  نہایت  طمطراق  کے ساتھ سال  دو ہزار  سنتالیس کی  آمد کا جشن منایا گیا۔  قومی اور صوبائی  دارالحکومتوں  میں  اونگھتی  صبح   اکتیس توپوں  کی گن گرج  سے  چونک اٹھی۔  حکومتِ وقت  کی جانب سے اس  سال کو  صد سالہ جشنِ آزادی کے  طور پر منانے  کا علان کیا  گیا تھا۔  ملک کے طول وعرض  میں  پورے سال  پر  محیط  ثقافتی شوز،  ملکی اور غیر ملک  سطح پر  کھیلوں  کے انعقاد  ، گرینڈ  فلم  فیسٹیولز  وغیرہ  کا  جامع  شیڈول  جاری  ہو چکا تھا۔   ترتیب  دیئے  گئے   پروگرام  کے مطابق  ان تقریبات میں  عالمی سطح کی گورونانک  یونیورسٹی  ننکانہ  صاحب اور  چانکیہ  انٹرنیشنل  یونیورسٹی  ٹیکسلا  کے زیرِ انتظام  عالمی  امن  کانفرنس   اور  بین المذاہب  ہم  آہنگی  پر  سیمینار  کا انعقاد  شامل تھا۔  نانگا  پربت  ،  گیشا بروم  ، میشا  بروم اور راکا پوشی  کی  آسمان  سے باتیں کرتی  برف  پوش  چوٹیوں  پر اس سال مزیدکوہِ  پیمائوں  کی گنجائش نہ ہونے  کی وجہ سے  انٹرنیشنل  الپائن  کلب  سے معذرت  کر لی گئی تھی۔   صد سالہ  جشنِ آزادی  کی  سب  سے بڑی  تقریب  اگست  کی   تیرہ  تاریخ کو  واہگہ بارڈر  پر   پاکستان  اور ہندوستان   کی حکومتوں  کے  مشترکہ   تعاون  سے  ہونا طے پائی تھی ۔  بنگلہ  دیش  کے  وزیرِ  اعظم  کو بھی اس  تقریب  میں  شرکت  کی خصوصی دعوت  دی گئی تھی۔  

      لائلپور  کے  معروف  بھگت  سنگھ  ایونیو  پر  واقع  سرکار  کے  زیرِ انتظام  چلنے  والے اولڈ ایج ہاوس  میں  بزرگ  شہریوں  کے  لیئے زندگی  کی تمام  ضروری  سہولیات  میسر تھیں ۔ تیرہ   اگست کی حبس آلود  دوپہر میں بے آواز  ایئرکنڈیشن  سے نکلتی  ہواکی  پرسکون لہروں  میں  درجن  بھر  طویل العمر  اشخاص  دوپہر کے کھانے کے بعد  خوش گپیوں  میں  مصروف  تھے۔  چند  ایک کیرم بورڈ  ،لوڈو  اور  شطرنج  کی بساط  سجائے ہوئے تھے۔  ایک ستاسی سالہ بابا  خدا  بخش  ٹیلی ویثرن  کی سکرین پر نظریں جمائے  کسی  گہری  سوچ  میں  گم  تھا  ٹیلی ویثرن  پر  واہگہ بارڈر  پر ہونے والی رنگا  رنگ تقریب بر اہِ  راست  دکھائی جا رہی تھی۔ کسی زمانے میں  ہونے والی  جھنڈا پریڈ کے  مقام  کو  تینوں ملکوں  کے پرچموں  ،  خیرسگالی  کے بینروں  اور  امن  وسلامتی  کے گیتوں  سے  آویزاں  دلکش پوسٹروں  سے سجایا  گیا تھا۔  سٹیج  عین اس گیٹ  کی جگہ  پر بنایا گیا تھا  جہاں  برسوں  پہلے  ہندوستان اور پاکستان  کے  سورمے  شیش ناگوں  کی طرح پھنکارتے  ایک دوسرے کو کھا جانی والی نظروں  سے گھورتے ہوئے سر  سے اوپر  تک   اٹھے قدموں  سے  مادرِ ارض  کا  سینہ کوٹتے  دکھائی دیتے تھے۔  جدھر تک  نکاہ  اٹھتی  مسرت  و  شادمانی  میں  جھومتے  دیدہ زیب  پیراہن  زیب تن کیے مرد و زن کا  ٹھاٹیں مارتا  سمندر  دکھائی دیتا۔  چھوٹے  جہازوں  کے ذریعے   اہلِ مجمع  پر گل پاشی کی جا رہی تھی۔  تینوں ملکوں  کے  پردھان منتری  دیگر اہم  شخصیات کے ہمراہ  سٹیج  پر پہنچ چکے تھے  ۔  اور کچھ ہی دیر میں  تقریب کا  آغاز  ہوا چاہتا تھا۔  

       چاچے خدا بخش  کے  پردہِ  ذہن  پر  چلنے  والے  مناظر البتہ  ٹیلی  ویثرن  کی سکرین پر  بکھرے  نظاروں سے  بالکل  مختلف  تھے۔  ان میں خوف  اور  بے   بسی  کے  کفن  میں  لپٹی   خون آلود  یادیں  اور نفرت  کے ساز  پر ناچتے  درد  کے  گیت تھے  ۔  وہ  گیت  جن کا  کرب  اس  نے  کئی بار اپنے ماں  باپ کے  ہونٹوں  پر  مچلتے دیکھا تھا۔  اس کے  والدین  کا تعلق  پٹھان  کوٹ  سے  دس  میل  جنوب  کی  جانب گورداسپور  جانے  والے  راستے  کے پاس  واقع  ایک  موضع  سے  تھا۔  تھوڑی  تعداد  میں  ہندو  اورکافی تعداد  میں سکھ  اس گائوں  میں  بستے  تھے  لیکن  اکثریتی آبادی  مسلمانوں کی تھی۔  مجموعی  طور پر گائوں  کا ماحول پر امن  اور بقائے  باہمی کے اصولوں  پر قائم  تھا۔تا ہم  ذاتی سطح  پر  ایک دوسرے  سے  دوستیاں  یارانے  بھی  پائے جاتے تھے۔   بٹوارے کا  ہنگامہ شورع  ہوا  تو  اس علاقے میں بسنے  والے  مسلمان  خاندان نہ  صرف  خوش تھے بلکہ  نہایت جوش  و خروش  سے پاکستان  کی تحریک میں  بڑھ چڑھ کر اپنا حصہ بھی ڈال رہے تھے۔  انہیں  پختہ  یقین تھا  کہ  پٹھان کوٹ اور گورداسپور  کا علاقعہ  مملکتِ خداد کا حصہ  بننے جا رہا ہے۔  اس کے برعکس  ہندو  اور  سکھ برادری کے لوگ متفکر  اور گھبرائے ہوئے  تھے  اور بہتر برتائو کی آس میں مسلمانوں کی خوشامد  اور چاپلوسی کرتے  دکھائی دیتے۔  ریڈ کلف  ایوارڈ  میں  ان علاقوں  کے بھارت  کے ساتھ  الحاق  کا علان ہوتے  ہی حالات   نے  ایسا پلٹا  کھایا  کہ  صورتِ حال  یکسر تبدیل  ہو گئی۔  مسلمانوں  کی آنکھوں  کے  بنیروں پر  امید  کے  جگنووں کی  جگہ  خوف  کے چراغ جلنے لگے۔ ہندئوں  اور خاص  طور پر  سکھوں  کی  آنکھوں  میں  جلتی ہوئی  انتقام  اور  نفرت  کی  آگ کی  چنگاریاں آنے والے  برے  دنوں  کا  پیش منظر  دینے  لگیں۔  ہجرت  کا  سلسلہ  اور  انسانیت  کا قتلِ عام  ایک ساتھ  شورع  ہو چکا تھا۔  خونی لکیر  کے ایک  طرف  کی اقلیت  پر ڈھائے جانے والے مظالم کے  جھوٹے سچے قصے  دوسری طرف کی اقلیت  کے قتلِ  عام  اور تباہی و بربادی کا شاخسانہ  ثابت  ہوتے۔  خدا بخش کے  سارے  خاندان کو پکی فصل  کی طرح کاٹ دیا گیا  صرف  اس کا باپ  چراغ دین  اپنے ایک  چچا زاد  بھائی  کے ساتھ چھپتے چھپاتے   شکر گڑھ  اور  ناروال کے راستے  زندہ سلامت  لاہور  پہنچنے میں کامیاب  ہوا۔  تقسیم  کے  تیرہ سال  بعد  خدا بخش  کو جننے والی  نورالنساء کو  اس  کے  خاندان کو قتل کرنے  کے بعد  علاقے کا ایک سکھ  بدمعاش  صوبہ سنگھ اٹھا کر لے گیا  جسے ڈیڑھ سال بعدگمشدہ عورتوں کو  تلاش کرنے کے لیے دونوں  ملکوں  کے اشتراک  سے بنائی جانی والی  ایک تنظیم  نے  چھ  ماہ  کے حمل  ساتھ  والٹن کیمپ  کی انتظامیہ  کے حوالے کیا۔  سات ماہ کے مردہ بچے کو جنم دینے کے  چند  ماہ  بعد  اسی  کیمپ  میں موجود  چراغ دین  نے اس سے شادی  کر لی ۔  خدا  بخش کی داستانِ  الم  کا  اگلا  صفحہ  اور بھی  دلخراش  اور  لرزہ  خیز تھا۔ اس  کے والد نے  اپنے علاقے کے کسی     اافسر  کے  تواسط  سے  پنجاب  رجمنٹ کی  ایک  یونٹ کینٹین کا  ٹھیکہ  حاصل کر رکھا تھا  ۔  انیس  سو  ستر  میں  جب  وہ زندگی کی دس بہاریں  دیکھ چکا  تو اُس یونٹ کو مشرقی پاکستان  بھیجنے کا حکم نامہ جاری  ہوا لہٰذہ چراغ دین  بھی یونٹ کے  ہمراہ  بیوی بچوں کو ساتھ لے کر  چٹاگانگ  چھائونی  جا  پہنچا ۔   ان  دنوں  علیحدگی  کی تحریک  زور  پکڑ چکی  تھی۔  ہمسایہ ملک  کی  طرف سے کی

جانے والی  درانداذی کی وجہ  سے  بنگالیوں  کے  دلوں  میں   مغربی پاکستان  والوں  کے خلاف بغض و عناد  کا پودا  تناور  درخت  کی شکل  اختیار کر چکا تھا۔  اس  پودے سے لپٹی  نفرت  کی اکاس  بیل  ہر  گزرتے  دن  کے  ساتھ  پھیلتی  جا  رہی تھی۔  اگلے  برس کا آغاز  ہوتے  ہی  مکتی  باہنی کے  تربیت  یافتہ   غنڈوں  نے  تحریکِ  آزادی  کے نام پر  مغربی پاکستان  سے تعلق  رکھنے والے  رہاشیوں  پر  حملے شورع  کر دیئے  ۔  فوجیوں  نے بھی چوڑیاں  نہیں  پہن رکھی تھیں  لہٰذہ  آئے  روز بڑھتی ہوئی لاقانونیت  اور درندگی  کی  اینٹ کا جواب  پتھر سے دیا جانے لگا۔  بات  بڑھتے بڑھتے  یہاں  تک پہنچ گئی کے  فوجی  چھاونیوں  پر  بھی حملے ہونے لگے۔  خدا  بخش  کے  ذہن  میں  گیارہ  سال  کی عمر  میں  اترنے والی  اس  گھناونی تاریک رات کا  ا یک ایک  منظر ابھی تک  لوحِ  محفوظ کی  طرح  نقش  تھا  جب  اس  کی  حاملہ  ماں  کو   بلوایوں نے  پیٹ میں  بندوق کی سنگینیں  مار مار کر  شہید کیا تھا۔   بھارت  میں  اڑھائی تین  سال  کی  قید کاٹنے کے بعد  چراغ  دین  واپس  پاکستان پہنچ کرزندگی  کی  اُلٹے  پائوں  چلنے والی  چڑیل  سے  نئے  عزم  اور  حوصلے کے ساتھ  دست وگریبان  ہو گیا۔  بالآخر  بچوں کو  آسودہ  اور  پر  آسائش  حال میں  چھوڑ کر  ملکِ  عدم  روانہ  ہوا۔  ۔  خدا  بخش  کو  مال و دولت  کی کمی نہیں تھی  ۔  اولاد  بھی  نیک ، پڑھی لکھی  اور  فرماں  بردار  تھی ۔  جدید دور کی مشینی زندگی اور اولاد کی  مجبوریوں کو سمجھتے  ہوئے  اس نے  بالرضا  باقی زندگی  اپنے ہم عمر  ہمجولیوں  کے ساتھ  بسر کرنے کے لیے اس  اولڈ ایج ہاوس  میں منتقل ہونے کو ترجیح دی ۔  

      پورچ میں  پھیپھڑے پھاڑ  پھاڑ کر بھونکتے  ہوئے  چوکیدار کے کتے  کی  آواز  سے ہڑبڑا کر آنکھ کھلی تو خد بخش کو  ایسے لگا  جیسے  وہ  اصحابِ  کہف کی  قربت میں کسی  اندھیرے غار میں  برسوں کی نیند سے جاگا ہو۔  ٹیلی ویثرن پر  واہگہ میں ہونے والی  تقریب  کی روداد  دکھائی جا رہی تھی۔  پاکستان  اور بنگلہ دیش کے وزرائے اعظم  نے اپنی اپنی  حکومتوں کی جانب  سے  انیس سو اکہتر  میں  دونوں  جانب  سے ہونے والے  مظالم  پر  اظہار   تاسف کرتے  ہوئے  دونوں ملکوں کے عوام  سے  معافی مانگی ۔  اس اعلان  کے ساتھ  ساتھ  بریکنگ نیوز  کا  سٹکر  چل  رہا  تھا۔  بھارت  اور پاکستان  سرکار  نے  سو سال  پہلے  تقسیم  کے دوران  ان گنت  معصوم  جانوں  کے قتل  اور  اور لاکھوں  لوگوں کی جبری نقل مکانی  پر  ان کو خراج ِ  عقیدت  پیش کرنے  اور  ان سے  اظہارِ   یک جہتی  کے لیے سواں  یومِ  آزادی  یومِ ندامت  کے طور پر  منانے کا فیصلہ کیا ہے۔

     ملک  خدا بخش   نے کسی  خوشی یا غم کے  تاثر کے بغیر عجب بے  حسی کے عالم  میں چینل بدلی کیا  تو  اس پر نہ جانے کتنی دہایاں  پہلے کہے  گئے  عظیم  انسان دوست  شاعر  فیض  احمد  فیض  کے  الہامی الفاظ گونج  رہے تھے :

                                     ؔ جو ہم  پہ گزری سو گزری  مگر شبِ  ہجراں  

                                      ہمارے عشق  تری  عاقبت  سنوار   چلے

توصیف احمد ملک ایک نوجوان افسانہ نگار اور علم دوست انسان ہیں .آپ کا تعلق .....پنجاب جھیلم  سے ہے  اور آپ انٹیرئیر ڈیزاینر ہیں . آجکل آبھا  میں مقیم ہیں -

Related Posts

Subscribe

Thank you! Your submission has been received!

Oops! Something went wrong while submitting the form