کے بی فراق کی نظمیں

January 12, 2019
"دیدبان شمارہ 9 "مزاحمتی ادبنثری نظمشاعری

کایا کلپ

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کے بی فراق

صبحِ دم مِری سوچ کا محور

شام سمے کی تنہائی میں

رات بھی اک

اژدر کی صورت

مجھ میں ایک پُر ہول اذیت

روح کی تھاہ میں

سر نہوڑائے

سوچ رہا ہے

کون ہوں مَیںاِس

کُنجِ نارسائی کی اتھاہ بھنور میں

کون مِری آواز کو جانے

اور مِرا وجود پہچانے

جو اِس پل کی گرفت میں جیسے

اننت وقت کی چیخ میں جاگے

اور یہ خود سے کہہ بھی رہا ہے

کہ مجھ میں یہ کون بول رہا ہے

اب کے روحِ عصر کے بھیتر

ایک یہی آواز ہے ہر سو

۔۔۔۔۔مَیں مسنگ پرسن نہیں ہوں شاید

پر خود میں یہ سب بھوگ رہا ہوں۔

۶ دسمبر ۸۱۰۲ئ

گواچن سے پرے بھی کچھ ہے؟

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کے بی فراق

ہم نارضامندی کی پیدائش میں

پیدا ہوئے ہی نہیں

اگر ہم پیدا ہوتے

تو ہماری حالت کچھ اور ہوتی

جانے یہ بات کیونکر تاریخ میں

یوں لکھ دی گئی

کہ جاﺅ

آج تم پر کوئی گرفت نہیں

تم سب آزاد ہو

لیکن آج تک مَیں

آزادی ایسے شبد کی معنویت سے آشنا نہ ہوسکا

اور نہ ہی اس کی سرشاری کو جی پایا ہوں

محض ایک بوسے کی سکرات میں جینے والے لوگ ہی دیکھ رہاہوں

جو خود سے بھی یہ سچ کہنے کی حسرت میں

پیدا ہوئے نہیں

اور اس خوف میں ہیں

کہیں کوئی یہ کہہ کرگرفت نہ کرلے

اس بابت یہ نہ کہہ جائے

یہ تم نے کیسے انگلی میں سگریٹ لینے کی چنتا

پال رکھی ہے

اور دھوئیں کے مرغولے میں خود کو

زمان و مکان کی بندش سے پہلے

آنول تلاشنے نکلے ہو

اور کس کے رحم کی اذیت میں دن بھوگ رہے ہو

یہ سب تو ہوناتھا اک دن

کیوں جلدی میں سب کچھ غارت کرنے میں

اپنا گیان لیے پھرتے ہو

جوکہ اب تک

بھیتر سے نکلے نہیں۔

کے بی فراق
  • poet.
  • chief executive officer,gwadar
  • Gews Reference Library
  • near Mir Ghaus Bakhsh Bezanjo stadium
  • harbor road
  • Gwadar, Balochistan
  • 08630

Related Posts

Subscribe

Thank you! Your submission has been received!

Oops! Something went wrong while submitting the form