دیدبان شمارہ 10

ماضی

نادیہ عنبر لودھی

__________________

میں پرانے رستوں پہ پلٹ کے نہیں جایا کرتی

جانے پہچانے راستوں پہ جانے سے

پرانے زخم کُھل سے جاتے ہیں

روح میں چھپے درد چھڑ جاتے ہیں

سو میں پلٹ کے نہیں جاتی

دھر ی ہوتی ہیں اداسیاں

رکھی ہوتی ہیں آہٹیں جابجا

خشک پتوں پہ

کہیں قدموں کی چاپ سنائی دیتی ہے

کہیں رات کی رانی اداس دکھائی دیتی ہے

کوئی محبت کا ساز بجاتا نظر آتا ہے

کسی کی آنکھوں میں وارفتگی کا لمحہ جگمگاتا ہے

نازک کلیاں چنتی اک لڑ کی دکھائی دیتی ہے

جس کی آنکھیں جگنوؤں سی چمکتی ہیں

خوش گمانی کے پھول جس کے چار سو کھلے ہیں

جس کے عارض حیا کی لالی سے سرخ ہوۓ ہیں

اس رستے پہ تھوڑا سا آگے جاکے منظر بدل سا جاتا ہے

نارسائی کا ناگ ڈس لیتا ہے

کوئی وعدے کی زنجیر سے باندھ کے جاتا ہے

تو پلٹتا نہیں

ان پھولوں کو

اس لڑکی کو

خواب بُنتی ان آنکھوں کے

کوئی انتظار سونپ جاتا ہے

جانے پہچانے رستوں پہ

بار بار جانے سے

اداسی ہی ملتی ہے

بیتے ماضی سے لپٹی

ویرانی ہی سسکتی ہے

میں جانے پہچانے رستوں پہ پلٹ کے نہیں جایا کرتی

_________

نادیہ عنبر لودھی

نادیہ عنبر لودھی کا تعلق اسلام آباد پاکستان سے ہے۔

Related Posts

Subscribe

Thank you! Your submission has been received!

Oops! Something went wrong while submitting the form