دیدبان شمارہ ١٣

احمد نعیم مالیگاؤں کے نوجوان منفرد تخلیقی اسلوب اور وجودی فکر کے حامل ادیب ، مائکرو فکشن رائٹر اور  شاعر جو ہینڈ لوم کاریگر بھی ہیں کی تخلیقی  نظم ماچس  مع عربی ، پنجابی اور  انگریزی زبان میں ترجمہ

"ماچس "

احمد نعیم مالیگاؤں مہاراشٹر ممبئی بھارت

نہ جانے کب

کسی آوارگی کے دوران

دبے پاؤں اس کی مددگار بن گئی

ایک ماچس

کبھی کسی نظم

کا بیج اگانے کے لیے

کبھی کسی کہانی کا عنوان

کھوج لانے کے لیے

کبھی کوئی شعر سلگانے کے لیے

یا پھر ٹھٹھرتی سردی میں محض

الاؤ دہکانے کے لیے

اور کبھی کبھی خود کو  مکمل جلانے کے لیے

کتنی کارآمد  ہے

یہ ماچس

جو اُس کے دل کے دائیں جیب

میں رکھی

تپش دیتی ہے

اس کے خالی کھوکھے میں اس نے کتنی نظمیں،

کہانیاں اور شعر چھپا رکھے ہیں

یہ صرف

وہ ہی جانتا ہے

کہ اس تجوری کی چابی رگڑنے سے

اندر کی روشنی باہر نکل آتی ہے۔

-------------------

للشاعراحمد نعیم مالیگاؤں مہاراشٹر ممبئی بھارت

قامت بالترجمة

الدكتورة خورشيد نسرين المعروفة باسم أمواج الساحل

============

 الثقاب

من يدري متى

أثناء التجول على غير هدى

أصبحت تساعده بعد أن تسللت إليه بالخطا

فعلبة أعواد الثقاب هذه أحياناً

تسعمل لإنبات

قصيدة ما

وأحياناً لإحضار

عنوان لقصة ما

وأحياناً لإشعال شعر من الأشعار

أو في برد يرتعش في الشتاء

لزيادة توهج النار الدافئة

وحيناً آخر لاستكماله لنفسه الفانية

كم من فوائد تأخذ الألباب

من هذا الثقاب

الذي يكمن في جيبه الأيمن من الفؤاد

تمنح الدفء والوداد

وكم من قصائد وقصص وأشعار

يخبئها في العلبة الفارغة

ولا يعرف إلا هو

أن احتكاك هذه الخزنة بمفتاحها

يسبب انبعاث الضوء من داخلها إلى الخارج.

----------------------

احمد نعیم کی نظم ‘ ماچس’ کا پنجابی ترجمہ۔

تیلیاں دی ڈبی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

خورےکدوں تیک

کسے وا ورولے وچ

پباں بھار ہلارے کھاندی

او اک

تیلیاں دی ڈبی اوہدی ساتھی بن گئی

کدی او

کسے نظم  دا  بیج اگاون لئی

کدی او

کسے کہانی دا سرنانواں لبھ لیاون لئی

کدھرے کسے بیت دی

نمی نمی اگ بالن لئی سلگاوے

تے جاں فیر کدے کنبدے سیت سیال لئی

بھانبڑ بنن لئی

تے کدی کدی

آپوں آپ نوں ساڑن لئی کنی گُنی اے ایہہ تیلیاں دی ڈبی

جیہڑی

اوس  دے دل دے سجے  پاسے  دے

کھیسے  وچ رکھی

تپ دی رہندی  اے

اوہنے ایس خالم خالی کھوکھے وچ

خورے کنیاں نظماں۔ کہانیاں تے

ون سونے بیت لُکائے ہوئے نیں

ایہہ گل صرف اوہ ہی جان دا اے

پئی ایس سوغاتاں  بھری

صندوقڑی  دی کنجی رگڑن  نال

اندر دا چانن

باہر بھاہ ماردا اے

(پنجابی ترجمہ فارحہ ارشد)

"ماچس " ___احمد نعیم مالیگاؤں مہاراشٹر ممبئی بھارت

---------------------

Bush Ahmed

by: Ahmed Naeem

Translation by: Bush Ahmed

Australia

Edited by: Louise Wakeling

. . . . . .

Who knows

When he was a vagrant

His helper

A box of matches

On silent footsteps

Sometimes to sow a seed

Of a poem

Sometimes to search for a title

Of a story

At times to light up a verse

Or in shivering cold

Just to start a blaze

And at times, to self immolate

How useful

Is this box of matches

That sits in the right side pocket of his heart

Warms him

Hiding in its empty box

How many poems, stories and verses

This, only he knows

That all he has to do

Is strike the box

Like rubbing Aladdin's lamp

And brilliant light would pour forth

----------------------

احمد نعیم

احمد نعیم

(مالیگاوں، ممبئی ، بھارت )

Related Posts

Subscribe

Thank you! Your submission has been received!

Oops! Something went wrong while submitting the form