دیدبان شمارہ ۔۱۱

نظم : نئی صبح

شاعر :یوسف خالد

نئی صبح طلوع ہو گی

مگر اس صبح سے پہلے

مسلط رات کے پہلو سے

کچھ اندھی سیاہ راتیں جنم لیں گی

اندھیرا اپنے پنجے گاڑ دے گا

ہر طرف اک رائیگانی رقص کرتی

بستیوں میں پھیل جائے گی

یہ ہونا ہے

کہ اس ہونے کی تیاری مکمل ہے

ہمارے منفعل کردار نے تاریکیوں کی فصل بوئی ہے

ہمیں یہ کاٹنا ہو گی

مسلسل بے حسی کو اب نتیجہ خیز ہونا ہے

یہ فطرت کے تقاضے ہیں

نئی صبح طلوع ہو گی

مگر اس صبح کا روشن سویرا کون دیکھے گا

کہ سورج کو تو ہم نے خوش دلی سے

لمبی چھٹیاں دے کے کوسوں دور بھیجا ہے

یوسف خالد

یوسف خالد

۔نام ---- محمد یوسف خالد

قلمی نام --- یوسف خالد

رہائش --- 10 مدینہ ٹاؤن ایم ایم عالم روڈ سرگودھا

ریٹائرڈ ہیڈ آف ڈیپارٹمنٹ گورنمنٹ کالج آف ٹیکنالوجی پی اے ایف روڈ سرگودھا

وزٹنگ لیکچرر( شعبہ پنجابی) یونیورسٹی آف سرگودھا

سابق چئیرمین یونائٹڈ ٹیچرز ایسوسی ایشن پنجاب

چیف ایڈیٹر ---- ادبی مجلہ ماہنامہ "نردبان" سرگودھا

بانی ممبر و سابق صدر -- سرگودھا رائٹرز کلب

شعری مجموعے

زرد موسم کا عذاب (1991)

ابھی آنکھیں سلامت ہیں (2009)

ہوا کو بات کرنے دیں (2012)

خواب سفر کا رستہ (2015)

اسے تصویر کرنا ہے ( 2017)

"نقطے" یوسف خالد کی شاعری اور شخصیت کے حوالے سے شعرا اور ادباء کی آراء

( مرتبہ ڈاکٹر یونس خیال 1990)

یوسف خالد کی تخلیقی جہات)معروف ناقدین کے مضامین کا مجموعہ ( مرتبہ - ڈاکٹر عابد خورشید 2016) " یوسف خالد، شخصیت اور فن" تنقیدی و تحقیقی مقالہ برائے ایم فل پروفیسر یوسف خالد شخصیت اور فن - تنقیدی و تحقیقی مقالہ برائے ایم فل یونیورسٹی آف سرگودھا

سکالر - حافظہ ظلِ ہما -- نگرانِ کار پروفیسر طارق حبیب ( شعبہءِ اردو یونیورسٹی آف سرگودھا)

یوسف خالد کی نظم گوئی - تنقیدی و تحقیقی مطالعہ برائے ایم فل ہزارہ یونیورسٹی مانسہرہ

سکالر ساجد خان --- نگران پروفیسر ڈاکٹر مطاہر شاہ

Related Posts

Subscribe

Thank you! Your submission has been received!

Oops! Something went wrong while submitting the form