غزل پریتپال سنگھ بیتاب

February 5, 2019
"دیدبان شمارہ 9 "مزاحمتی ادبغزلغزل

دیدبان شمارہ 9

اپنی رفتار کا انداز بدل کر دیکھو

خود سے دو چار قد آگے نکل کر دیکھو

آسماں چھونا کچھ ایسا بھی نہیں ہے مشکل
اپنی دھرتی سے ذرا اونچا اُچھل کر دیکھو

وسعتیں راستوں میں آنکھیں بچھا ئے کھڑی ہیں
ذات کے خول سے باہر تو نکل کر دیکھو

پکے رستے سے اُتر کر کسی پگڈنڈی پر
گر کے دیکھو تو کبھی خود کو سنبھل کر دیکھو

پیر و مُرشد کوئی رستے پہ نہ لائے تم کو
کوئی دن اپنے تفکر پہ عمل کر دیکھو

ہر قدم دیکھتے رہتے ہو رہ ِ ہمسفراں
اپنے ہمراہ کبھی تھوڑا سا چل کر دیکھو

برف موسم کے پرندے ہو تمہےں کےا معلوم
کبھی قُقنوس کی مانند بھی جل کر دےکھو

دوسروں سے رکھے رہتے ہو اُمیدیں جھوٹی
خود سے بہلائو کبھی خود سے بہل کردیکھو

یہاں من مرضی کا سانچہ نہیں ملتا بےتاب ؔ
اپنی اوقات کے سانچے میں ہی ڈھل کر دےکھو

_________

پریتپال سنگھ بیتاب

توصیف احمد ملک ایک نوجوان افسانہ نگار اور علم دوست انسان ہیں .آپ کا تعلق .....پنجاب جھیلم  سے ہے  اور آپ انٹیرئیر ڈیزاینر ہیں . آجکل آبھا  میں مقیم ہیں -

Related Posts

Subscribe

Thank you! Your submission has been received!

Oops! Something went wrong while submitting the form