قرض کے قصر محبت کی کچھ ادائیگی

August 5, 2018
دیدبان شمارہ ۸،مزاحمتی ادبتبصرہ

دیدبان شمارہ ہشتم

منیر رزمی کا دیدبان جلد اول پر تبصرہ

قرض کے قصر محبت کی کچھ ادائیگی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

دید بان ۔۔۔۔جلد اول ۔۔۔عالمی ادب سے انتخاب 1

....۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ایجوکیشنل پبلشنگ ہاوس ، دہلی سے محمد احسن ریسرچ فاؤنڈیشن کے اشتراک سے 2017ء میں چھپی کتابی سلسلہ کے مرتبین میں سے۔۔۔۔سوشل اور پرنٹ میڈیا میں معروف ناموں میں سے سبین علی (جدہ، سعودی عرب ) ۔۔۔۔۔۔۔سلمی جیلانی ( نیوزی لینڈ ) اور ڈاکٹر نسترن فتیجی ( علی گڑھ ، انڈیا ) سے تعلق رکھتی ہیں ۔۔۔۔۔۔

ہمارا کسی مذہبی ، سیاسی اور ادبی گروہ سے کوئی تعلق نہیں۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یہ فرمودہ آغاز سخن سے پہلے میں نے پڑھا اور آخری صفحہ کاشمار کیا تو وہاں 420 نمبرصفحات معنی خیز مندرج تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔

بقول شخصے ۔۔۔۔ادب کا کوئی مزہب نہیں ہوتا ، کے ژولیدہ بیانیہ سے صرفِ نظر کرتے ہوئے ہیں ۔۔۔۔۔۔پڑھنے والے کا کوی نہ کوی مزہب ضرور ہوتا ہے خواہ وہ رواجی ہو یا روایتی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میری طرح کے قاری ۔۔۔۔شعوری مسلمان ۔۔۔۔۔بھی ہوتے ہیں۔۔۔۔جن کے دین میں پڑھنا پڑھانا مجبوری کی چوری نہیں بلکہ دین کی لازم ضرورت ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔( قرآن کریم کی پہلی آیت کریمہ کے نزول سے جنگ بدر کے کافر قیدیوں سے علم حاصل کرنے تک ذہن نشین رہے ) ۔۔۔

رگو ناتھ ساہو۔۔۔۔۔۔کے دیدہ زیب سرورق کے ایک اوپر والے کونے میں ۔۔۔اللہ ۔۔۔کے باریک سفید نقوش کے اجلے پن کےبعد صفحہ نمبر 301 سے حصہ نظم میں ۔۔۔۔۔۔۔29نظموں اور 2 غزلوں کا آغاز ۔۔۔۔۔دو حمد باری تعالیٰ ( سید انور جاوید ہاشم ۔۔۔عشرت معین سیما ) دو نعت رسول مقبول صلی اللّٰہ علیہ وسلم ( ناصر محمود اعوان ۔۔۔عابی لکھنوی ) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اردو ادب کی تاریخ کی جانب مژدہ جانفزا میں صبحِ صادق کی جھلک ہے جسے کوئی صدا دبا نہیں سکتی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کتابی سلسلہ کے مرتبین نے 22 افسانوں سے سے متحیر کرنے کا فیصلہ کیا اور ۔۔۔۔۔کچی مٹی کابند ( انور سدید ) ۔۔۔۔محمد حامد سراج کے برادہ اور محمود احمد قاضی کے کتے۔۔۔۔۔۔۔نے وہ فسوں باندھا کہ ابھی تک سحر طاری ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اللہ بھلا کرے محمد حامد سراج کے اجلے سجیلے اور رسیلے گیتوں کے بول جیسے فسوں ساز فسانے کا ۔۔۔۔۔۔ایک جملہ جس میں ساری زندگی کا فسانہ درج ہے اور وہ ہم جانتے اور مانتے ہوئے بھی پہچانتے نہیں لیکن موت خود کو منوا ہی لیتی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وہ اسی روز مر گیا تھا جس روز پیدا ہوا تھا ۔۔۔۔ !

انور سدید۔۔۔کو ہمارے قلمی کارندوں نے جیتے جی دریا برد کرنے کی کوشش کی تھی مگر وہ کچی مٹی کا بند ثابت ہویں اور محبت سب پر غالب آ سکتی ہے ، اس فسانے نے تعبیر سنادی۔۔۔۔۔۔

دیدبان کے سرورق کے مصور عجب خان ( پھلاں دا سہرا ۔۔لہو رنگ ۔۔۔۔ڈیرہ اسماعیل خان ) ۔۔۔۔۔مصور ممتاز حسین ( شہر نگاراں ۔لاہور سے تعلق۔۔۔۔امریکہ میں مقیم ) اور مصور رگو ناتھ ساہو (بھونیشور۔۔اڑیسہ ۔۔انڈیا ) کے مختصر مگر انتہائی جامع تعارف ۔۔۔۔رنگوں کی شاعری کی چاندنی میں منور ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کتابوں پر تبصرے ۔۔۔تراجم ۔۔۔قسط وار ناول ۔۔۔۔8مضامین اور 16 مائیکرو فکشن ( افسانچے ) کے علاوہ قارہین کی آراء سے پہلے نعیم بیگ کا پیش لفظ (دید بان ، اکیس ویں صدی کا ادبی افق علی گڑھ والی ڈاکٹر نسترن فتیجی کی عرضداشت ۔۔۔۔۔۔۔۔۔میں ابھی بہت کچھ مطالعہ کرنا ہے لیکن اس سے قبل اپنے۔۔۔۔کچہ کھوہ کے نیم کچے انقلابی رومان پرور مہربان ۔۔۔۔۔جاوید اقبال سہو کے حساب محبت کو سلام پیش کرتا ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

آفتابِ نبوت کی کرنیں ۔۔۔۔۔قرآن وحدیث کی روشنی میں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

نیم پکے رنگ کے بلالی ۔۔۔۔۔مجاہد حسین۔۔۔۔۔۔۔اصل میں بخاری سید ہیں اور یک از مضافات چیچہ وطنی میں رہنے کی وجہ سے مزید گم نام ہیں حالانکہ باب العلم کی نسبت ہے ۔۔۔۔یہ 11... ویں کتاب ہے جو دینی حلقوں میں ذوق و شوق سے 2017 ء سے ضیاء باری کر رہی ہے ۔۔۔۔۔424 صفحات کا ھدیہ مبلغ 300 روپے ہے۔۔۔۔۔۔۔کتب خانوں سے خریدیں تاکہ سلسلہ خیر کا چراغ روشن رہے ۔۔نوجواں دینی مزاج کے اس سپوت کے لیے ڈھیروں دعائیں ۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پس پردہ ساز

کہتے ہیں کہ ہنسنا ہنسانا بہت بڑا فن ہے ۔۔۔۔، رونا رلانا اس سے بڑا فن ہے۔۔۔۔۔۔۔

سرکاری ملازمت کے اکثر مراحل پر ایک بہت سنجیدہ مسئلہ درپیش ہوگا ۔۔۔اپنے ضمیر کی نشوونما جاری رکھیں یا شکم پروری کا اہتمام بحال رکھا جائے ۔دونوں میں سے ایک راستہ اختیار کرنا پڑے گا ۔۔۔۔۔۔۔۔

نزیر مومن نے سی ایس ایس کے امتحان میں کامیابی حاصل کی جب وہ ایم اے انگریزی کرچکے تھے اور پاکستان دنیا کے نقشہ میں سبز ہلالی پرچم کی بہار بن گیا تب لاہور کی مال روڈ میں ۔۔۔حضرت میاں میر رحمۃ اللہ اور حضرت شاہ چراغ رحمۃ اللّٰہ کے قرب میں عدالت عالیہ سے متصل ۔۔۔ناظم حسابات پنجاب ، لاہور میں اس لائلپور کے شہزادے نے ملازمت کی طلائی زنجیر پہنی اور 1983 ء تک صراطِ مستقیم کا راستہ اختیار کیا حالانکہ شاعری جزو زندگی رہی۔۔۔۔۔۔۔۔چونکہ پاکستان کے اعلیٰ افسر نقطہ نظر کا اختلاف برداشت کرنے کےلئے کبھی تیار نہیں ہوتے اس لئے ملازمت کے آخری 14 سال افسر بکار خاص رکھ کر ضروری مراعات سے ناجائز طور پر محروم رکھا اور 15 ستمبر 1983 ء کو ساٹھ سال پر پروانہ آزادی دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔یہ أواز دوست والے مختار مسعود کے بیج میٹ ہونے کے باوجود ان کی طرح سفر نصیب نہ ہوئے ۔۔۔۔۔۔

پس پردہ ساز ۔۔۔۔1990ء میں 500 کی تعداد میں چھپی تب اس کی قیمت 75 روپے تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔اقبال شناس نامور پروفیسر مظفر حسین وڑائچ نے ساہیوال میں میری تاریخ پیدائش کی سالگرہ سے چار دن پہلے 21 جون 2018 ء کو تحفتاً کتاب کلچر کو جمال دیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔قرض واجب تھا ۔۔۔شکریہ کی رسید اب لازم تھی کہ ۔۔۔۔۔سرکاری دفتروں میں پس پردہ ساز کے چلمن سے اب صدق ہجرت کر چکی ہے ۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سفنے

رچناوی کلچر خیال کو آنگن دیتا ہے ۔۔۔۔۔۔نین نقش سے ایک سجیلی کتاب کا آوازہ ۔۔۔۔۔راول دیس کے ایک کڑیل جوان رعنا بزرگ ۔۔۔ادب ۔صحافت میں اپنی ڈھب کے قلمی دوست ۔۔۔۔جبار مرزا نے لگایا اور گشتی ( از راہ نوازش اسے پنجابی لفظ کے معنی میں نہ سمجھا جائے ) گشت کرتے ہوئے جاوید اقبال سہو کے ہاتھوں سے پھسلی اور اس فقیر نے چیچہ وطنی میں اچک لیا ۔۔۔۔۔

یوسف عالمگیرین ۔۔۔۔۔۔معروف لکھاری۔۔صحافی ۔۔۔شاعر اور کالم نگار کی حیثیت سے کسی تعارف کے محتاج نہیں ۔۔۔۔اپریل 2018ء میں 125 صفحات پر پنجابی شاعری میں پہلے چار صفحات نک سک سے دوشیزہ ہیں اور ۔۔۔۔۔اندر سفنے ۔۔۔۔میرے اور آپ کے ہیں۔۔۔۔۔۔

سچی گل اے

سچی گل لئ

سچی مچی مرنا پیندا اے

ایسی سچی شاعری پر میں صدقے صدقے جاواں

قلم فاؤنڈیشن انٹرنیشنل ، یثرب کالونی، بینک سٹاپ ، والٹن روڈ ، لاہور کینٹ نے چھاپی اور اور لاہور سے میرے آشنا اور پنجابی کے منے پرمنے شاعر زاہد حسن نے خوب ویروا کیا اور ھمارے جبار مرزا تو فلیپ پر بھی اول ٹھہرے۔۔۔۔۔۔۔۔ابھی اور کچھ بات کرتا مگر ھمارے جبار مرزا کو ۔۔۔۔تبری بازی سے فرصت نہیں ۔۔۔۔۔۔۔اور ھم دیوار کی دوسری جانب ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس لیے اگلی محبت کی آمد تک ۔۔۔۔۔ہم نسیمِ سحر کے ساتھ ہیں اور یوسف عالمگیرین کا بسیار تشکر ادا کرتے ہیں ۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

محبت بھوت ہے شاید ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہم سب افسانہ ہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ساہیوال پرنٹنگ پریس کے محتمم ۔۔۔۔اختر خان ۔۔۔۔مجھے بہت محترم ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔اس سادھو سنت اور جوگی منش پبلشر کا مزاج نہیں رکھتے ۔۔۔۔۔۔اس لیے مجھے تو عزیز ہیں مگر ھمارے ایک آدھ کرم فرما شکوہ سنج رہتے ہیں خیر کاروباری مراکز سے دور ہوں تو سب چلتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔

رچناوی کلچر کو ھمارے ایک لفظ شناس پروفیسر محمد اقبال عابد نے۔۔۔۔۔مانگی ہوی محبت ۔۔۔۔۔۔۔میں امرت رس دیا ہے۔۔۔۔ایک دن پریس پہنچے تو مزکورہ ناول آمد و رفت کی خبر سنا رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ناول پایاب سمندر کو تیر کر عبور کرنا ہوتا ہے اور افسانہ راوی جیسے دریائے محبت کا سفر بن جاتا ہے ۔۔۔۔۔۔اس لیے اختر خان نے حسبِ معمول دو افسانوی مجموعے عطا فرمائے تاکہ چناب کو کچے گھڑے پر تیر کر عبور کروں ۔۔۔۔۔۔

سہیل اسجد۔۔۔۔شاعر ہے اور اولین شعری مجموعہ۔۔۔خیال دید ۔۔۔۔کا خالق ہے ۔۔۔۔۔۔یہ دوسرا شعری مجموعہ بار اول 21جون2016 ء میں ساہیوال پرنٹنگ پریس سے شایع ہوا۔۔قیمت 300روپے اور ڈاکٹر مرتضیٰ ساجد ، شازیہ اکرم نایاب ایڈووکیٹ ، سید علی حسن شیرازی اور رفیق کاشمیری نے نثر میں بسرام کیا اور واصف سجاد نے فلیپ میں لکھا کہ یہ۔۔۔۔۔۔۔سیماب صفت شاعر نت نئی سوچ میں لگا رہتا ہے اور یہ خوبی اس کی شاعری کے لیے نیک فال ثابت ہوئی ہے کہ ہر غزل ایک نیا احساس لیے آتی ہے اور ہر نظم نیے لباس میں جلوہ گر ہوتی ہے ۔۔۔۔۔۔

اسجد جو ربط لے کا ہے سر اور تال سے

نسبت ہے اس قدر ہی مجھے ساہیوال سے

ہجرت ہر ایک دور میں کیوں ہم سفر رہی

حیرت زدہ ہوں پاؤں کے چھبتے سوال سے

لو یاد پھر سے آہ جدائی کی آ گئی

بہلا رہا ہوں ہجر کو میں بیس سال سے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔حیرت کدے کے اس سپوت کے دوسرے شعری مجموعہ کا عنوان ۔۔۔۔۔۔۔محبت بھوت ہے شاید ! ۔۔۔۔۔۔۔اپنی جگہ حیرت کے حجرے میں داخل کر دیتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ہم سب افسانہ ہیں ۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔اسلم سحاب ہاشمی کے 15 افسانوں کی کتھا ہے جو ساہیوال پرنٹنگ پریس سے ستمبر 2012 ء میں پروفیسر عطا الرحمن قاضی (ایں خانہ ہمہ آفتاب است ) کی تدوینی معاونت سے اختر خان کی نگرانی میں شایع ہوا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ڈاکٹر سلیم اختر ۔۔۔۔نے مسافتوں کی داستان ۔۔۔۔۔کے عنوان سے مختصر لکھا مگر دریا کو کوزے میں بند کر دیا ۔۔۔۔۔ڈاکٹر محمد سلیم ملک کی خوشبو ان کی جمالیات کو زیبائی دیتی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔

اسلم سحاب۔۔۔۔۔۔کی تحریر میں ۔۔۔رس ۔۔۔ہے ۔۔۔اپنے نرم لہجے اور ملائم لفظوں کی حفاظت کرنا جانتے ہیں ۔۔۔۔۔۔اسلم سحاب ہاشمی کا شعری مجموعہ ۔۔۔۔۔۔۔۔پہلا خواب ۔۔۔۔ کے نام سے چھپ چکا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ان دنوں الیکشن کے ہنگام میں ہر ایک اپنا حساب کو احتساب کی اپنی اپنی کسوٹی پر پرکھ رہا ہے۔۔۔۔۔۔میں نے کچھ قرض اتارنے کی رسید یں پیش کی ہیں اور ادب کے اس بے ادب کی زنبیل میں ابھی اور بہت کچھ باقی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یوں بھی ساقی کی نوازش جاری ہے ۔۔۔۔۔اور غروب ہونے سے پہلے کون طلوعِ آفتاب کو خوش آمدید نہیں کہتا ۔۔۔۔۔۔۔ الحمدللّٰہ رب العالمین

منیر احمد رزمی

  منیر رزمی تلمبہ کے ایک ماہر تعلیم معروف شاعر خادم رزمی کے صاحب زادے ہیں -قلمی نام منیر ابنِ رزمی۔۔۔۔25 جون 1953 ء جھنگ کی تحصیل احمد پور سیال کی ایک مضافاتی بستی ۔۔۔سجاول چدھڑ میں ننھیال میں پہلی اولاد ہونے کی روایت میں ننھیال میں آنکھ کھولی۔۔۔۔۔۔تاریخی قصبہ نما شہر تلمبہ سے میٹرک کیا ۔۔۔خادم رزمی والد پرایمیری سکول میں مدرس تھے۔۔۔۔خادم رزمی اُردو اور پنجابی / رچناوی کے شاعر تھے۔۔۔۔۔زر خواب ان کی اردو غزلوں کا مجموعہ اور من ورتی رچناوی شاعری ( صدارتی ایوارڈ یافتہ ) ان کی زندگی میں چھپا۔۔۔۔۔محقق کے طور پر ضلع خانیوال میں لمبی قبروں اور دیگر آثار قدیمہ کے حوالے سے وقیع کام شروع کیا جس کا اعتراف تاریخ سرزمین ضلع خانیوال کے مصنف نے دیباچے اور کتاب کے اندر متعدد حوالہ جات میں کیا ۔۔۔۔۔5 شعری مجموعے ابھی اشاعت کے منتظر ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔لسانیات کے حوالےسے ساندل بار۔۔۔گنجی بار ۔۔نیلی بار کے وسیع علاقے کی زبان کو جسے کبھی جانگلی اور کبھی ابھیچڑ لہجہ کہا گیا کو ۔۔۔۔سراہیکی اور ماجھے سے الگ اور اصل زبان قرار دینے کی تھیوری پیش کی اور اس کا نام ۔۔۔رچناوی ۔۔۔۔تجویز کیا۔۔۔۔۔۔۔میں نے جامعہ پنجاب ، لاہور سے ایم۔اے پنجابی اور اردو ۔۔۔ لاء کی ڈگری حاصل کی۔۔۔۔رحیم یارخان ۔۔۔چیچہ وطنی اور ملتان میں اردو کا استاد رہا۔۔۔۔24جون 2013 ء بحیثیت پرنسپل کالج ریٹائر ہونے کے بعد چیچہ وطنی میں رہائش پذیر ۔۔۔۔۔۔ لکھنے لکھانے کا شوق والد گرامی سے ملا۔۔۔۔۔نثر سے دلچسپی زیادہ ہے ۔۔۔۔۔۔۔چند مضامین ۔۔۔۔کتابوں پر تبصرے اور دیباچے لکھے ہیں۔۔۔۔لکھنے سے کم اور پڑھنے سے زیادہ دلچسپی ہے۔

Related Posts

Subscribe

Thank you! Your submission has been received!

Oops! Something went wrong while submitting the form