دیدبان شمارہ 9

ہمارا کل اثاثہ
اونٹ پر لدا لکڑی کا اک صندوق
جس میں پڑا ہے بیٹی کے جہیز کا
سوٹ
جس پر آدھی کڑھائی ہو چکی
سوئی اور دھاگے
کچھ برتن اور اناج
ہماری کلائیوں میں سفید کڑے
کًھن کَھن کرتے
ہماری چنریاں پیاسے صحرا میں
رنگ بھریں
جہاں دور تک
ریت ہی ریت
چند بستر
دو مٹی کے گھڑے
اور ہمارے ساتھی مور
ہم چل پڑتے ہیں
اس جانب
جہاں ٹِبے میں
تھوڑا سا گدلا پانی ملے
اونٹ بکریاں اور مور
ہمارے ساتھ
اُسی جوہڑ سے سیراب ہو لیتے ہیں
ہم تھری خانہ بدوش
قحط سے لڑتے
خار دار جھاڑیوں کی مانند
سوکھ کر کانٹا ہوئے بھی
جئے چلے جاتے ہیں
سبین علی
۔۔۔۔۔

سوا نیزے کے سورج تلے
پیاس کی تپتی آنکھیں
جو تھری ریت کے بگولوں سے بلند ہوتی ہیں
تکتی ہیں چناب اور جہلم کی جانب
کئی سسیاں کئی مارویاں
ننگے پاؤں میلوں تک
پانی کی تلاش میں بھٹکتی ہیں
اور لاہور کی فضا میں
کثیف دھواں اترنے لگتا ہے
بادل راستے میں سے ہی
عیار ہوائیں چرا لیتی ہیں
اور مجھے شبہ ہوتا ہے
کہیں تھر کی تپتی آنکھوں نے
اپنی اُس زبان سے موسموں کو
کوئی بددعا تو نہیں دی تھی
جو قحط زدہ مور کے ساتھ
سوکھ کر کانٹا ہو گئی تھی

سبین علی
۔۔۔۔۔

سبین علی

Sabeen Ali is a short story writer, poet, literary critic, and one of the editors of Deedbaan online literary magazine. She is from Lahore Pakistan, currently living in Jeddah, Saudi Arabia.

Related Posts

Subscribe

Thank you! Your submission has been received!

Oops! Something went wrong while submitting the form