شبنم عشائی کی نظمیں

May 4, 2020
دیدبان شمارہ 11 نظمیں نظمیں

دیدبان شمارہ 11

شبنم عشائی کی نظمیں

کسی ناکردہ جرم کی پاداش میں

زندگی سے سبکدوش ہو گئی ہوں

سہم کے خود میں بیٹھی ہوئی ہوں

کائینات

میری چوکڑی میں سمٹ گئی ہے

زندگی کی ہر شئے اپنی آنکھیں

مجھ پر مرکوز کئے ہوئے ہے

میں مر چکی ہوں کہ آیا زندہ ہوں

ان کی نظریں

طے نہیں کر پاتیں۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

منزلوں کی تلاش میں

جتنی بھی مٹّی کریدی تھی

اس سے اپنے من کے

خالی پن کو بھرنا تھا

تم اس میں

کون سے پھول تلاش کرنے لگے

اس مٹی سے

میری کھوئی ہوئی محبتوں کی

خوشبو آتی ہے

پھول کہیں اگے ہی نہیں

محبت کا کھیت ابھی

بار آور ہوا ہی نہیں۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

انتشار کیوں بوتے ہو

وقت کا سایہ ڈھلتے ہی

نئی دھوپ آئے گی

نئی کونپلیں کھلیں گیں

انتشار سے اگی ٹہنیاں

نفرت کے پھولوں سے لد جائینگی

پھول اپنی خوشبو سے کٹ جائینگے

زمین اپنا سینہ چاک کریگی

اور کھدیڑ دیگی اپنی کھیت سے

تمہارا منچ ۔۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

انبار لگے ہیں

اذیتوں کی روئی کے

کتنی اذیتوں کا سوت کاتوں

من کی تکلی نڈھال ہے!

روئی کے سینے میں چھپی

کوئی چنگاری آگ لگا دے

اس سے پہلے

چادر بنتی ہوں بنکر نہیں ہوں

چادر کا سائیبان کرتی ہوں!

تم اپنے تھان نہ کھولو

من کی عریانی کم پڑیگی ۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Shabnam Ishai

....................

Related Posts

Subscribe

Thank you! Your submission has been received!

Oops! Something went wrong while submitting the form