ادبی پرچہ لانا  نہایت  جاں فشانی و

عرق ریزی مانگتا ھے ۔۔ نظم و نثر کی چھانٹ بانٹ، وقت کا چناؤ ، جونئرز،سینئرز کے ناطے حفظِ مراتب کا خیال رکھنا  نخریلےلکھاریوں سے تحاریر حاصل کرنا آسان نہ تھا لیکن یہ عجیب خواتین ہیں۔۔ سلمی جیلانی ۔۔ سبین علی اور نسترن فتیحی ایک تکون بناتی ھوئی گلوبل ویلج کے مختلف منطقوں کو جوڑتی ہیں اور بہت خوبصورت چیزیں اکٹھی کرتی ھوئی بہت نویکلے شمارے لا رہی ہیں ۔۔ آٹھواں شمارہ جو مزاحمتی ادب/شاعری کو گھیرتا ھے ۔۔ خصوصی طور پر یہاں ھم اس ضمن میں حمیدہ شاھین ،، ڈاکٹر ابرار احمد، عزرا عباس ، اسنی بدر اور نیئر حیات قاسمی کی نظمیں جب مطالعے مین لاتے ہیں تو واقعی مزاحمت عطر بیز نظر آتی ھے۔۔ اس طرح دید بان ۔۔8  منفرد ٹھیرتا ھے ۔۔ اب تو دیدبان پرنٹنگ میں بھی متشکل ھو رہا ھےاور بڑے ادبی پرچوں میں شمار ھونے لگا ھے۔۔

تنویر قاضی

تنویرقاضی کی پیدائش  11 ستمبر  1955کو ننکانہ صاحب میں ہوئی- تعلیم  ۔۔۔  ایم ۔ اے  ۔،۔ پنجابی ، ڈپلومہ ( انسیٹیوٹ آف بینکرز ین پاکستان)کرنے   کے بعد بینکر کی پیشہ ورانہ ذمہ داریوں کو نبھا تے ہوئے شاعری سے  بھی ناتہ نہیں توڑا .اس طرح ان کا شعری مجموعہ "جادو سبز ھواؤں کا 1998 میں آیا .ان کی پہلی  غزل "  پاکستانی ادب . کراچی  ، 1974 ..بیسویں صدی  ۔۔ دیلی انڈیا  ۔۔۔ 1974 اور پہلی  نظم ۔۔  وارث شاہ  ۔ملتان۔ (1974)میں شائع ہوئی 

Related Posts

Subscribe

Thank you! Your submission has been received!

Oops! Something went wrong while submitting the form